کثیرالمنزلہ عمارتوں کی تعمیر پر پابندی سے معیشت کو نقصان ہوگا،عارف جیوا

ایسوسی ایشن آف بلڈرز اینڈ ڈیولپرز (آباد) کے چیئرمین محمد عارف یوسف جیوا نے کہا ہے کہ کراچی میں کثیرالمنزلہ عمارتوں کی تعمیر پر پابندی کے خلاف احتجاجی تحریک کے لیے آباد پر ممبران کا شدید دباؤ ہے، آباد کسی ادارے کے خلاف محاذ آرائی نہیں چاہتا تاہم ہم بڑے پیمانے پر احتجاج کے ذریعے اعلیٰ حکام و دیگر متعلقہ حلقوں تک اپنا پیغام پہنچائیں گے۔کثیرالمنزلہ عمارتوں کی تعمیر پر پابندی کے باعث مہنگائی کا طوفان آنے والا ہے جس کی وجہ سے شہر ایک بار پھر بدامنی کی لپیٹ میں آجائے گا،وفاقی ،سندھ حکومتوں نے کوئی تدارک نہ کیا تو ملکی معیشت کو ناقابل تلافی نقصان پہنچے گا۔ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین آباد نے کہا کہ بلند عمارتوں کی تعمیر پر پابندی کے باعث کراچی میں 6 ماہ سے تعمیراتی کام ٹھپ ہوکر رہ گئے ہیں جس کے نتیجے میں میگا سٹی میں ہونے والی 900 ارب روپے کی سرمایہ کاری رک گئی اور تعمیراتی شعبے سے وابستہ انجینئرز، آرکیٹکچر سمیت 6 لاکھ افراد بے روزگار ہوگئے ہیں۔عارف جیوا نے وفاقی ،صوبائی حکومتوں اور اعلیٰ عدلیہ سے اپیل کی ہے پاکستان کی معیشت کو تباہ ہونے سے بچانے کے لیے اقدامات کئے جائیں۔ تعمیراتی سرگرمیاں رک جانے کے باعث تعمیراتی شعبے کی ذیلی صنعتوں پر بھی شدید دباؤ ہے،اگر پابندی مزید برقرار رہی تومزید 20 لاکھ افراد بے روزگار ہونے کا خطرہ ہے جس کے اثرات پاکستان کی معیشت کے لیے خوفناک زلزلے سے کم نہیں ہوں گے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Social Media Auto Publish Powered By : XYZScripts.com