جامعہ کراچی، این ٹی ایس داخلہ ٹیسٹ کے لئے لازمی نمبر کی شرط40فیصد کردی

جامعہ کراچی نے اکیڈمک کونسل کی مرضی کے برخلاف این ٹی ایس کے داخلہ ٹیسٹ میں50فیصد لازمی نمبر لانے کی شرط کو کم کر کے40فیصد کر دیا ہے، جامعہ کی تاریخ میں یہ پہلی مرتبہ ہے کہ داخلہ ٹیسٹ میں50فیصد نمبروں کو کم کرکے40فیصد کر دیا گیا ہے۔ سابق وائس چانسلر ڈاکٹر محمد قیصر کے دور میں بھی پاسنگ نمبرز 50فیصد رہے تاہم موجودہ وائس چانسلر ڈاکٹر اجمل کے پہلے سال ہی میں معیار پر سمجھوتہ کرتے ہوئے اسے کم کر کے40فیصد کر دیا گیا ہے۔ پڑوس میں واقع جامعہ این ای ڈی نے طویل عرصے سے داخلہ ٹیسٹ کے پاسنگ مارکس 50 فیصد رکھے ہیں اور تعلیمی معیار پر کبھی سمجھوتا نہیں کیا۔ بتایا جاتا ہے کہ جامعہ کراچی کی جانب سے داخلوں میں غیرمعمولی تاخیر کے باعث اچھے نمبروں کے حامل امیدواروں نے نجی جامعات کا رخ کر لیا تھا اور پھر این ٹی ایس ٹیسٹ میں امیدواروں کی بڑی تعداد50فیصد نمبر لانے میں کامیاب نہیں ہو سکی۔ دلچسپ امر یہ ہے کہ28دسمبر تک جامعہ کراچی ایک بھی داخلہ فہرست جاری نہیں کر پائی ہے جب کہ ماضی میں دسمبر میں داخلے مکمل ہو جایا کرتے تھے اور سابق وائس چانسلر کے دیئے گئے تعلیمی کلینڈر کے مطابق جنوری سے کلاسوں کا آغاز بھی ہو جایا کرتا تھا۔ جامعہ کراچی کے ترجمان فاروق کے مطابق کچھ شعبوں میں طلبہ50فیصد نمبر حاصل نہیں کر سکے تھے جب کہ کلیہ تعلیم میں پہلے ہی40فیصد نمبر حاصل کرنا ضروری تھا لہٰذا طلبہ کے وسیع تر مفاد میں داخلہ کمیٹی کے اجلاس میں یہ فیصلہ کیا گیا کہ کلیہ تعلیم کی طرح دیگر شعبوں میں پاسنگ نمبرز کو40فیصد کر دیا جائے۔

Social Media Auto Publish Powered By : XYZScripts.com