پیمرا کا وزیر اعظم کے خلاف جھوٹی خبر نشر کرنے پر 17 نیوز چینلز کو نوٹس جاری

پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) نے وزیر اعظم عمران خان سے قومی احتساب بیورو (نیب) کے چیئرمین کی ملاقات سے متعلق جھوٹی خبر نشر کرنے پر 17 ٹی وی چینلز کو اظہار وجوہ کے نوٹسز جاری کرتے ہوئے 7 روز میں جواب طلب کر لیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق پیمرا نے وزیر اعظم عمران خان اور چیئرمین نیب جسٹس (ر)جاوید اقبال کی جھوٹی خبر نشر کرنے پر 17 ٹی وی چینلز کو اظہار وجوہ کا نوٹس جاری کرتے ہوئے 7 روز میں جواب طلب کر لیا ہے۔

پیمرا کی جانب سے جن چینلز کو نوٹسز جاری کیے گئے ان میں جیو نیوز، دنیا نیوز، آج نیوز، ایکسپریس نیوز، نیو نیوز، 24 نیوز، بول نیوز، 7 نیوز، میٹرو ون، ہم نیوز، اے آر وائی نیوز، سما، پبلک نیوز، 92 نیوز، جی این این، چینل 5 اور ’’کے 21 نیوز‘‘ شامل ہیں۔

پیمرا نے مذکورہ ٹی وی چینلز کو نوٹس جاری کرتے ہوئے کہا کہ جھوٹی خبر نشر کرنا پیمرا قوانین بشمول پروگرام اور ایڈورٹائزنگ ضابطہ اخلاق 2015 کی صریحاً خلاف ورزی ہے۔

اس سلسلہ میں اتھارٹی متعدد بار ٹی وی چینلز کو جھوٹی اور غیر تصدیق شدہ خبر نشر کرنے پر تنبیہ کر چکی ہے، جبکہ متعدد چینلز کو جرمانے بھی ہوچکے ہیں، نیوز چینلز اس بات کے پابند ہیں کہ کسی بھی خبر کو نشر کرنے سے قبل اس کی تصدیق کرلیں۔


تاہم مشاہدے میں یہ بات آئی ہے کہ نیوز چینلز آگے بڑھنے کی دوڑ میں کسی بھی چینل پر چلنے والی بریکنگ نیوز کو من و عن بغیر تصدیق کیے اپنے مذکورہ چینلز پر نشر کر دیتے ہیں۔

پیمرا کی جانب سے ٹی وی چینلز کو یہ یاد دہانی بھی کرائی گئی ہے کہ کسی بھی غلطی کو روکنے کے لیے مناسب ‘ٹائم ڈیلے میکنزم’ کی تنصیب بھی نشریات کا لازمی جزو ہے۔

اتھارٹی نے 17 ٹی وی چینلز سے کہا ہے کہ وہ 7 روز میں اظہار وجوہ کے نوٹسز کے جواب دیں، مقررہ وقت میں جواب نہ ملنے کی صورت میں تمام چینلز کے خلاف پیمرا قوانین کے تحت یک طرفہ کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔

دوسری طرف وزیر اعظم ہاؤس کے ترجمان نے بھی نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئےوزیر اعظم اور چیئرمین نیب کی ملاقات کی خبروں میں کوئی سچائی نہیں،میڈیا وزیر اعظم سے متعلق کوئی بھی خبر نشر کرنے سے قبل پی ایم آفس سے کے ترجمان سے تصدیق کرلیا کرے۔