روزانہ 20 ہزار افراد کی قبل از وقت موت، وجہ کیا؟

عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کی ایک رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ دنیا بھر میں روزانہ تقریباً 20 ہزار افراد فضائی آلودگی کے باعث قبل ازوقت مر جاتے ہیں۔

عالمی ادارہ صحت نے  کہا ہے کہ فضائی آلودگی تمباکو نوشی اور غیر صحت مند غذائیں کھانے سے زیادہ خطرناک بیماریوں کا باعث بنتی  ہے۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن  نے خبردار کیا ہے کہ فضائی آلودگی پہلے کے خیال سے بھی زیادہ خطرناک ہے۔ کیونکہ یہ اہم آلودگیوں جیسے نائٹروجن ڈائی آکسائیڈ کی محفوظ سطح کو کم کر دیتا ہے۔

عالمی ادارہ صحت کا کہنا ہے کہ  فضائی آلودگی کو کم کرنے کے لئے فوری اقدامات کرنے ہوں گے۔ اپنے 194 رکن ممالک پرزور دیا ہے کہ زہریلی گیسوں کی اخراج میں کمی کریں اور موسمیاتی تبدیلیوں پر کارروائی کریں

یاد رہے کہ فضائی آلودگی دل  اور فالج جیسی بیماریوں سے منسلک ہے۔ بچوں میں ، یہ پھیپھڑوں کی نشوونما کو کم کر سکتا ہے اور بڑھتی ہوئی دمہ کا سبب بن سکتا ہے۔

صحت و صفائی کے لئے عالمی ادارہ صحت نے رہنما خطوط کو مزید وسعت دے دی ہے جن پر عمل کرکے لاکھوں زندگیاں بچائی جاسکتی ہیں۔ کہا گیا ہے کہ  فضائی آلودگی کے مضر اثرات موسمی تبدیلی کے منفی اثرات کے برابر ہیں۔