ڈالر کی قیمت 144 روپے تک جانے کا امکان

پاکستانی روپے کے مقابلے میں امریکی ڈالر کی اڑان جاری ہے۔

مارکیٹ ذرائع کے مطابق ہفتے کے روز بھی مارکیٹ میں ڈالر کے مختلف ریٹس چل رہے ہیں۔ کراچی میں منی چینجرز 142روپے 50پیسے میں ڈالر خرید رہے ہیں اور 143روپے 50 پیسے میں فروخت کررہے ہیں۔

کراچی کے برعکس راولپنڈی میں منی چینجر کا کہنا ہے کہ وہ  ڈالر 142 روپے 20 پیسے میں خرید رہے ہیں اور 142روپے 90پیسے میں فروخت کررہے ہیں۔

مارکیٹ ذرائع کا کہنا ہے کہ ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر مزید گر سکتی ہے، امکان ظاہر کیا جارہا ہے کہ ڈالر کی قیمت 144 روپے تک جا سکتی ہے۔

گزشتہ روز انٹربینک میں ڈالر کی قیمت 141 اور اوپن مارکیٹ میں 141 روپے 70 پیسے رہی۔

فاریکس ایسوسی ایشن کے مطابق جمعے کے روز انٹربینک میں ڈالر ساٹھ پیسے مہنگا ہوا اور اوپن مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت 30 پیسے اوپر گئی۔

پی ٹی آئی کی حکومت کے اقتدار میں آنے سے اب تک ڈالر کی قیمت میں 8 روپے کا اضافہ ہوا ہے۔ستمبر 2018 میں ڈالر 134 روپے پر ٹریڈ کررہا تھا اور چھ ماہ میں بڑھ کر 142 روپے پر پہنچ چکا ہے۔

یاد رہے کہ دنیا بھر میں معیشتوں کی درجہ بندی کرنے والے ادارے موڈیز نے 2019 کے اختتام تک پاکستان میں ڈالر 148 روپے تک جانے کی پیش گوئی کی تھی۔