پاکستانی چاکلیٹی ہیرو وحید مراد کو مداحوں سے بچھڑے 36 سال بیت گئے

پاکستانی فلم انڈسٹری کے مایہ ناز اداکار اور چاکلیٹی ہیرو کہلانے والے وحید مراد کی 36 ویں برسی آج منائی جارہی ہے۔

اپنی لازوال اداکاری سے شہرت کی بلندیوں پر پہنچنے والے وحید مراد نے 2 اکتوبر 1938ء کو فلم ساز نثار مراد کے گھر آنکھ کھولی۔ کراچی یونیورسٹی سے انگریزی ادب میں ایم اے کیا بعد ازاں فلمی کیرئیر کی شروعات 1962ء میں بننے والی فلم ’اولاد‘ سے کی۔

برصغیر میں دلیپ کمار کے بعد وحید مراد وہ واحد ہیرو تھے جن کے ہیراسٹائل اور ملبوسات کی نقل کی گئی۔ وحید مراد اپنے مخصو ص انداز میں مکالموں میں جان ڈالنے کا ہنر خوب جانتے تھے۔ وحید مراد کی ایک خاص بات جو انھیں دیگر اداکاروں سے ممتاز کرتی ہے وہ یہ کہ ان کے انتقال کو تین دہائیاں گزر جانے کے بعد بھی وہ اپنے مداحوں کے دل و دماغ میں بسے ہوئے ہیں۔

25 سالہ فلمی کیریئر کے دوران وحید مراد نے شہرت کی وہ بلندی دیکھی جس کی مثال بہت کم ملتی ہے، یوں تو بطور ہیرو وحید مراد کی پہلی فلم ’ہیرا اور پتھر‘ تھی مگر سلور اسکرین پر 75 ہفتے مسلسل چلنے والی فلم ’ارمان‘ نے وحید مراد کو بام عروج پر پہنچایا اور وہ پاکستانی فلم انڈسٹری کے پہلے باقاعدہ سپر اسٹار کہلائے۔

وہ ایک دور میں ہدایت کار پرویز ملک کی ٹیم میں رہے جس میں گیت نگار مسرور انور، موسیقار سہیل رعنا اور گلوکار احمد رشدی بھی شامل تھے اس ٹیم نے کامیاب فلموں کے ریکارڈ قائم کیے۔ فلمی ناقدین کہتے ہیں کہ وحید مراد ایک فرد نہیں بلکہ ایک دور تھے۔

چاکلیٹی ہیرو وحید مراد نے فلم ’دوراہا، عندلیب، جب جب پھول کھلے، سالگرہ، انجمن، جہاں تم وہاں ہم، پھول میرے گلشن کا، دیور بھابھی سمیت‘ 124 فلموں میں کردار نگاری کی۔ وحید مراد کے فلمی عروج و زوال کو ہالی ووڈ ایکٹر ایلوس پریسلے سے تشبیہ دی جاتی ہے جنھوں نے طویل شہرت کے بعد ایک دم زوال کا منہ دیکھا۔

23 نومبر 1983ء کو پاکستانی فلم انڈسٹری کو نئی جدتیں دینے والے وحید مراد دار فانی سے کوچ کرگئے۔ فنی خدمات کے صلے میں و حید مراد کو لائف ٹائم اچیومنٹ ایوارڈ سمیت ستارہ امتیاز، نگار، گریجویٹ، نیشنل، مصور سمیت دیگر اعزازات سے نوازا گیا۔ لاکھوں دلوں پر راج کرنے والا یہ خوبصورت فنکار صرف 45 برس کی عمر میں ہی دنیا سے رخصت ہوگیا۔