ناظم آباد میں انو بھائی پارک کے قریب سے کھدائی کے دوران انسانی ہڈیاں برآمد، تحقیقات شروع

ناظم آباد میں انو بھائی پارک کے قریب سے کھدائی کے دوران انسانی ہڈیاں برآمد ہوئی ہیں جس کے بعد پولیس نے تحقیقات شروع کردی ہیں۔

پولیس کے مطابق ناظم آباد نمبر 3 میں انو بھائی پارک کے قریب سے کھدائی کے دوران انسانی ہڈیاں برآمد ہوئیں تاہم اس حوالے سے تحقیقات مکمل کرلی گئی ہیں، ڈاکٹروں کی ٹیم کے مطابق ہڈیاں کئی سال پرانی ہیں جب کہ برآمد ہونے والی ہڈیاں نجی اسپتال کی جانب سے دفنائی گئی تھیں جس کی اسپتال کی جانب تصدیق کی گئی ہے۔

دوسری جانب ناظم آباد میں واقع نجی اسپتال نے پولیس کے موقف کی تردید کردی ہے، ایڈمنسٹریٹر نجی اسپتال کے مطابق ہڈیاں اس طرح کہیں دبانا ہمارا طریقہ کار نہیں ہے، اسپتال میں روزانہ اعضا نہیں کٹتے، ایسا کبھی کبھار ہوتا ہے جب کہ ہم کٹنے والے اعضا جمع نہیں کرتے، لواحقین خود ہی لے جا کر قبرستان میں دفن کردیتے ہیں اور اگر کوئی نہ لے کر جائے تو اسپتال کا عملہ خود قریبی قبرستان میں دفن کردیتا ہے۔

وزیر صحت سندھ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ اسپتالوں میں ہڈیوں کو دفن کرنے کی پریکٹسز ماضی میں ہوا کرتی تھیں، اب اسپتال یہ پریکٹسز نہیں کرتے، موجودہ دور میں میڈیکل اسٹوڈنٹس مصنوعی ڈیڈ باڈیز پر پریکٹیکل کرتے ہیں۔